محبت کے قیدی


فرمان نواز

میں جب اُس کو دیکھتا ہوں
ایسا لگے جیسے میں خود کو دیکھتا ہوں
وہی سوچ، وہی غلطیاں، وہی فسانے
جیسے میں اپنا دوسرا جنم دیکھتا ہوں
کچھ نیا کرنے کی لگن میں مگن
وہی بغاوت کرنے کی روش دیکھتا ہوں
ہے اُسے بھی سچی محبت کی تلاش
اُسے محبت فروشوں کے بیچ دیکھتا ہوں
کیسے میں کھینچوں اُس کے ہوش کا دھاگہ
کہ میں یہ دھاگہ ہی کمزور دیکھتا ہوں
جی چاہتا ہے محبتوں کے سب رنگ دکھا دوں اُسے
پر خود کو اپنی محبتوں میں گرفتار دیکھتا ہوں

Advertisements
Categories:

One Comment

  1. V good

    *** This message has been sent using QMobile A8 ***

    Farman Nawaz wrote:

    Farman Nawaz posted: “فرمان نواز میں جب اُس کو دیکھتا ہوں ایسا لگے جیسے میں خود کو دیکھتا ہوں وہی سوچ، وہی غلطیاں، وہی فسانے جیسے میں اپنا دوسرا جنم دیکھتا ہوں کچھ نیا کرنے کی لگن میں مگن وہی بغاوت کرنے کی روش دیکھتا ہوں ہے اُسے بھی سچی محبت کی تلاش اُسے محبت فروشوں کے بیچ دی”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s