میں جس سے پیار کرتا ہوں اُسی سے دور رہتا ہوں


By Farman Nawaz

میں ناز مینوں کی محبت میں ہمیشہ مجبور رہتا ہوں
میں جس سے پیار کرتا ہوں اُسی سے دور رہتا ہوں
تیرے دیدار کیلئے لوگوں سے ملنا پڑتا ہے
دردِ دل لیکر بھی مغرور رہتا ہوں
نہیں پتہ تجھے محبت ہے یا دل لگی ہے
پر میں تو ہر وقت دردِ فرقت سے چور رہتا ہوں
وہ جگہ آج بھی چومتا ہوں جہاں تو بیٹھتا تھا
اُس جگہ بیٹھ کر گھنٹوں دنیا سے دور رہتا ہوں
اپنی رسی بشر کے،بشیر کی ناخداؤوں کے ہاتھ میں
میں خداؤوں ناخداؤوں کے چکروں سے اب دور رہتا ہوں

Advertisements
Categories:

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s